FINALITY OF PROPHEHOOD PBUH

The Prophet of Islam, Hazrat Muhammad (PBUH) is the last Messenger and Prophet of Allah. To affirm that Muhammad is the last of Allah’s Prophets is just as necessary as the declaration and belief in the Oneness and Omnipotence of Allah. Just as there is no partner in the Unity and Supreme Omnipotence of Almighty Allah, no one shares the unique advent of the finality of the Prophethood of Muhammad (PBUH). You can judge the importance of the belief in the Finality of Prophethood by the fact that our religion and Imaan (belief) depend on it. If any person (or group) denies this tenant, undoubtedly he is a non-believer and out of Islam. He has no relationship with Islam or Muslims. Unity of the Ummah is also connected to this.

FINALITY OF PROPHEHOOD PBUH

ختم نبوت صلی اللہ علیہ وسلم:-                                  

لغوی معنی:۔                                                                                  

ختم عربی زبان کا لفظ ہے جس کا معنی مہر لگانا،آخر تک پہنچانا،کسی کام کو مکمل کر کے فارغ ہونا کے ہیں۔ 

اصطلاحی معنی:۔                                                                                 

اسلامی شریعت میں ختم نبوت کا مفہوم یہ ہے کہ حضور اکرم صلی اللہ علیہ وسلم سب سے آخری نبی ہیں ۔آپ صلی اللہ علیہ وسلم کی تشریف آوری کے بعد نبوت کا سلسلہ ختم ہوگیا ۔

حضور اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کے بعد کوئی نیا نبی نہیں آسکتا اور جو شخص اپنے نبی نبی ہونے کا دعویٰ کرتا ہے اور جو بدبخت اس کے اس دعوے کو سچا تسلیم کرتا ہے وہ دائرہ اسلام سے خارج ہیں اور وہ اسی سزا کا مستحق ہے کہ جو اسلام نے ایک مرتد کے لیے مقرر کی ہے۔

دلائل:                                                                                   

قرآن کی روشنی میں عقیدہ ختم نبوت:۔                                                                                                         

  1. قرآن پاک کی معتدد آیات میں ختم نبوت کو بیان کرتے ہوئے اللہ تعالی فرماتے ہیں۔                                        

سورہ احزاب میں اللہ تعالی فرماتے ہیں۔                                     

“محمد تم مردوں میں سے کسی کے باپ نہیں ہیں لیکن وہ اللہ کے رسول اور آخری نبی ہیں 

اس آیتے مقدسہ میں اللہ تعالی نے محمد صلی اللہ علیہ وسلم کا نام لے کر ان کے ختم نبوت کا ذکر کیا 

  1. سورہ مائدہ میں اللہ تعالی فرماتے ہیں۔                                       

آج میں نے تمہارے لئے تمہارے دین کو مکمل کر دیا اور تمہارے اوپر اپنی نعمت کو تمام کردیا اور تمہارے

 لئے لیے لیے بطور دین دین اسلام کو پسند فرمایا۔                                                            

کسی کسی نبی کی ضرورت پیش آنا:۔                                                                                                     

نبی پاک صلی اللہ علیہ وسلم پر دین کامل ہونا اس بات کی علامت ہے کہ نبی پاک صلی اللہ علیہ وسلم اللہ کے آخری نبی ہیں کیونکہ آپ کے بعد کسی اور نبی کا آنا اس وقت تک ممکن ہوتا جب آپ صلی اللہ علیہ وسلم کا دین اور آپ صلی اللہ وسلم کی شریعت میں کوئی کمی ہوتی جس کمی کو دور کرنے کے لئے کوئی نبی نیا آتا ہے اور اس کا نامکمل ہونا ناممکن ہے اسی طرح نبی کا آنا بھی ناممکن ہے۔     

  1.   سورہ سبا میں اللہ تعالی ختم نبوت کو یوں بیان کرتے ہیں۔                 

اور (اے رسول صلی اللہ علیہ وسلم) ہم نے آپ کو تمام لوگوں کے لئے خوشخبری سنانے والا اور دوزخ سے ڈرانے والا بنا کر بھیجا ہے ۔۔                                                                                   

عیسائیت میں یہ مسلم دودھ ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم دنیا کے تمام آنے والوں کے لیے رسول ہیں۔اگر آپ صلی اللہ علیہ وسلم کے بعد کسی نبی کی عزت کو جائز قرار دیا گیا ہوتا تو لازم آئے گا کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم تمام لوگوں کے لئے اصول نہیں ہے بلکہ بعض لوگوں کے لئے کوئی اور رسول آئے گا اور اس سے یہاں جو بھی ہو جائے گی وہ پرانے مجید کا جھوٹا ہونا محال ہے اس سے یہ ثابت ہوتا ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے بعد کوئی نبی نہیں آئے گا۔                                                          

سورہ اعراف میں اللہ تعالی یوں بیان کرتے ہیں۔                               

آپ صلی اللہ علیہ وسلم فرما دیجئے اے لوگو! بے شک میں تم سب کی طرف سے اللہ کا رسول ہوں۔۔                                          

اللہ تعالی سورہ انبیاء میں ختم نبوت کچھ یوں بیان فرماتے ہیں۔                         

اور ہم نے آپ صلی اللہ علیہ وسلم کو تمام جہانوں کے لئے رحمت بنا کر بھیجا۔                                         

احادیث کی روشنی میں عقیدہ ختم نبوت:۔                                                                                

حضور اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: میری اور مجھ سے پہلے گزرے ہوئے انبیاء کی مثال ایسی ہے جیسے ایک شخص میں ایک عمارت بنائی اور ہوں حسین و جمیل بنائیں مگر ایک کونے میں ایک اینٹ کی جگہ چھوڑی ہوئی تھی۔لوگ اس خوبصورت عمارت کے اردگرد گھومتے اور اس کی خوبصورتی پر حیران ہوتے مگر ساتھ ہی یہ بھی کہتے ہیں کہ اس جگہ عید کیوں نہیں رکھیں گی تو عید میں خون اور میں خاتم النبیین ہوں۔                            

  1. اس حدیث میں اللہ کے نبی کے بیان کرتے ہیں جب ایک عمارت مکمل ہو جاتی ہے اور اس میں کوئی خالی جگہ نہیں رہتی تو کوئی ماہر سے ماہر انجینئر بھی اس میں ایک دن کا اضافہ نہیں کر سکتا۔ہاں ایک صورت میں ہی کر سکتا ہے کہ پہلی امتوں میں سے کوئی ایک اینڈ پر وہاں سے نکال دی جائے اور پھر اس خالی جگہ پر کوئی اور اینٹ لگا دی جائے میری تشریف آوری سے نبوت کا عمل مکمل ہوچکا ہے اب میرے بعد کسی نبی کے آنے کی گنجائش نہیں اور اس کے ساتھ ساتھ سابقہ انبیاء میں سے کسی نبی کو وہاں سے نکالا جائے اور نبی کی جگہ بنائی جائے۔         
  2. ثوبان اللہ تعالی عنہ سے مروی ہے کہ رسول صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا:۔                 

کہ میری امت میں سے 30 کالج آف ہوں گے جن میں سے ہر ایک یہ دعویٰ کرے گا کہ وہ نبی ہے حالانکہ میں خاتم النبیین ہوں اور میرے بعد کوئی نبی نہیں آئے گا۔             

  1. نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا:                                                                       

اگر میرے بعد کسی کسی کا نبی ہونا ممکن ہوتا تو عمر بن خطاب نبی ہوتے۔

حضرت انس بن مالکرضی اللہ تعالی عنہ بیان کرتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا۔بیشک رسالت اور نبوت ختم ہو چکی ہے بس میرے بعد کوئی نبی ہوگا اور نہ کوئی رسول۔۔

  1. حضرت ابو ذر غفاری سے رضی اللہ تعالی عنہ بیان فرماتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم فرماتے ہیں کہ اے ابوذر!پہلے رسول آدم ہیں اور آخری رسول محمد صلی اللہ علیہ وسلم ہے۔۔ 

  نبی آنے کی صورتیں:۔                                                                                        

  • پہلے نبی کو کسی اور نبی کی ضرورت عورت مرد کے لیے ہو۔ 
  • پہلے نبی کی تعلیمات پہنچی نہ ہو یا بھلا دی گئی ہو۔ 
  • پہلے نبی کی تعلیمات نامکمل ہوں۔ 

   اجماع صحابہ:۔                                                                                                                         

تمام صحابہ کرام کا اس بات پر اتفاق ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم اللہ کے آخری نبی ہیں اور آپ صلی اللہ وسلم کے بعد قیامت تک کوئی اور نبی نہیں۔یہی وجہ ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سلم اور صحابہ کرام کے دور میں جن لوگوں نے نبوت کا دعویٰ کیا تھا کہ صحابہ کرام نے ان کے خلاف علم جہاد بلند کیا اور انہیں جہنم واصل کیا۔جھوٹے مدعیان نبوت میں مسیلمہ کذاب سمجھا اسود عسنی اور طلحہ کے نام نمایاں ہیں۔جن کے خلاف دور عثمانی اور دور صدیقی میں میں جہاد کیا گیا کیا اور ان کی جھوٹی عصمت کو خاک میں ملا دیا گیا۔

اجماع امت:۔                                                                                                                               

ختم نبوت کا عقیدہ اسلام کے ان چند بنیادی عقائد میں سے ایک ہے جن پر پوری امت کا اجماع ہے۔اگرچہ قسمتی سے امت کی فرقوں میں بٹ گئی ہے لیکن شدید اختلافات کے باوجود سارے فقہ اس بات پر متفق ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم اللہ کے آخری نبی ہیں اور آپ صلی اللہ وسلم کے بعد کوئی نیا نبی نہیں آئے گا۔

پاکستان کے قانون میں ختم نبوت کے خلاف قانون:۔                                                                            

1973 کے آئین کے مطابق ق جو شخص اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے کے آخری نبی ہونے کے خلاف ناف کو کوئی بات یا اس بات پر یقین نہیں رکھتا وہ دائرہ اسلام سے باہر ہے اور پاکستان کے قانون میں اس شخص کو غیر مسلم قرار دیا جاتا ہے اسی وجہ سے سے 1973 کے قانون میں قادیانیوں کو غیر مسلم قرار دے دیا گیا۔

What's Your Reaction?

like
3
dislike
0
love
2
funny
0
angry
0
sad
0
wow
2